Philosophy of Money

Philosophy of Money

Money is a strange thing. It is quite unlike any other “thing” that we know. Its value manifests itself only in a social context where we have pre-agreed conventions as to what it should be. In this sense, money is not a thing at all, but a meta-thing, which is why you are happy when your boss gives you a letter stating that you got a fat bonus even though you never actually see the physical thing. Well, if it is not physical, it is metaphysical, and we can certainly talk about the philosophy of money.

The first indication of the meta-ness of money comes from the fact that it has a value only when we assign it a value. It doesn’t possess an intrinsic value that, for instance, water does. If you are thirsty, آپ کو معلوم ہے کہ پانی کی بے حد قیمت ہوتی ہے,,en,اگر آپ کے پاس پیسہ ہے,,en,آپ پانی خرید سکتے ہیں,,en,یا پیریئر,,en,اگر آپ نفیس بننا چاہتے ہیں,,en,اور اپنی پیاس بجھاو,,en,لیکن ہم اپنے آپ کو ایسے حالات میں ڈھونڈ سکتے ہیں جہاں ہم پیسوں سے چیزیں نہیں خرید پائیں گے,,en,صحرا میں پھنسے ہوئے,,en,پیاس سے مرنا,,en,ہم اپنی آسمان سے زیادہ کریڈٹ کی حدوں کے باوجود یا ہمارے بٹوے میں موجود سیکڑوں ڈالر کے باوجود پانی خرید نہیں سکتے ہیں,,en,ہماری اس نااہلی کی ایک وجہ عیاں ہے,,en,ہم اکیلے ہو سکتے ہیں,,en,پیسہ کی بنیادی لین دین کی قیمت تب بخار ہوجاتی ہے جب ہمارے ساتھ لین دین کرنے والا کوئی نہیں ہوتا ہے,,en,پیسہ کے میٹا نیس کی دوسری جہت اقتصادی ہے,,en,یہ اچھی طرح سے پہنے ہوئے رسد اور طلب کے اصول میں روشن ہے,,en,لین دین کی لیکویڈیٹی سنبھالنا,,en,یہ ایک اصطلاح ہے جو میں نے ابھی تکلیف دہ آواز کے لئے تیار کی ہے,,en,میں مانتا ہوں,,en,جس کا مطلب بولوں:,,en. Of course, if you have money, you can buy water (or Perrier, if you want to be sophisticated), and quench your thirst.

But we may find ourselves in situations where we may not be able to buy things with money. Stranded in a desert, for instance, dying of thirst, we may not be able to buy water despite our sky-high credit limits or the hundreds of dollars we may have in our wallet. One reason for this inability of ours is obvious – we may be alone. The basic transactional value of money evaporates when we have nobody to transact with.

The second dimension of the meta-ness of money is economical. It is illustrated in the well-worn supply-and-demand principle, assuming transactional liquidity (which is a term I just cooked up to sound erudite, I confess). I mean to say, یہاں تک کہ اگر ہمارے پاس صحرا میں پانی کے بیچنے والے تیار ہوں,,en,وہ دیکھ سکتے ہیں کہ ہم اس کے لئے مر رہے ہیں اور قیمت میں جیک لگائیں,,en,صرف اس وجہ سے کہ ہم ادا کرنے کے لئے تیار اور قابل ہیں,,en,یہ صاف پانی کے منحرف فروشوں کی جانب سے پھیل رہا ہے,,en,بالکل قانونی,,en,تب ہی ممکن ہے جب سوال میں موجود اجناس کی فراہمی بہت زیادہ ہو,,en,ہمیں اجناس کی لیکویڈیٹی کی ضرورت ہے,,en,جب لیکویڈیٹی سوکھ جاتی ہے تو مزہ شروع ہوتا ہے,,en,صحرا میں پانی کے آخری قطرہ کی لاتعداد داخلی قیمت ہے,,en,یہ اثر مذکورہ بالا فراہمی اور طلب کے رجحان کی طرح نظر آسکتا ہے,,en,لیکن یہ واقعی مختلف ہے,,en,اندرونی قدر باقی ہر چیز پر حاوی ہے,,en,ذرہ طبیعیات میں مختصر فاصلوں پر مضبوط قوت کی طرح,,en,اور یہ تسلط معاشیات میں پسماندہ افادیت کو کم کرنے کے قانون کی فلپسائڈ ہے,,en, they may see that we are dying for it and jack up the price – just because we are willing and able to pay. This apparent ripping off on the part of the devious vendors of water (perfectly legal, by the way) is possible only if the commodity in question is in plentiful supply. We need commodity liquidity, as it were.

It is when the liquidity dries up that the fun begins. The last drop of water in a desert has infinite intrinsic value. This effect may look similar to the afore-mentioned supply-and-demand phenomenon, but it really is different. The intrinsic value dominates everything else, much like the strong force over short distances in particle physics. And this domination is the flipside of the law of diminishing marginal utility in economics.

پیسہ کے بارے میں جو چیز قدرے عجیب و غریب معلوم ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ لگتا ہے کہ یہ معمولی افادیت کو کم کرنے کے قانون کے خلاف ہے۔,,en,آپ کے پاس جتنا زیادہ پیسہ ہے,,en,جتنا آپ چاہتے ہیں,,en,ایسا کیوں ہے,,en,اس کی خاص قدر نہ ہونے کی وجہ سے یہ خاص طور پر حیرت زدہ ہے,,en,بڑے مالی ذہنوں کا پتہ نہیں چل سکا,,en,لیکن بہت ہی افسوسناک اور یادگار بیانات سامنے آئے,,en,لالچ,,en,بہتر لفظ کی کمی کے لئے,,en,اچھا ہے.,,en,اگرچہ یہ خاص ذی شعور صرف خیالی تھا,,en,وہ جدید کارپوریٹ اور مالیاتی دنیا میں زیادہ تر سوچ کی نمائندگی کرتا ہے,,en,اچھا یا برا,,en,آئیے فرض کریں کہ لالچ انسانی فطرت کا ایک لازمی جز ہے اور دیکھیں کہ ہم اس کے ساتھ کیا کرسکتے ہیں,,en,نوٹ کریں کہ میں کچھ کرنا چاہتا ہوں,,en,کے ساتھ,,en,یہ,,en,ایک اہم امتیاز,,en,نڈر کالم نگار کہ میں ہوں,,en. The more money you have, the more you want it. Now, why is that? It is especially strange given its lack of intrinsic value. Great financial minds could not figure it out, but came up with pithy and memorable statements like, “Greed, for lack of a better word, is good.” Although that particular genius was only fictional, he does epitomize much of the thinking in the modern corporate and financial world. Good or bad, let’s assume that greed is an essential part of human nature and look at what we can do with it. Note that I want to do something “with” it, not “about” it – an important distinction. I, intrepid columnist that I am, آپ کو یہ بتانا چاہتا ہوں کہ زیادہ سے زیادہ رقم کمانے کے ل other دوسرے لوگوں کے لالچ کو کس طرح استعمال کریں,,en,مقداری مالیات,,en,wilmott,,en,اپنی زندگی کیسے گذاریں؟,,en,"منی کا فلسفہ" پر خیالات,,en,سلیم,,en,بس اپنے ہوم پیج پر ٹھوکر کھائی,,en,بہترین کام,,en,آپ کی کتاب پڑھنے کے منتظر,,en,سلیم,,en,این آر آئی ٹیکساس,,hmn,غیر حقیقی بلاگ میں خوش آمدید,,en.

Photo by 401(K) 2013

Comments

2 thoughts on “Philosophy of Money”

  1. Manoj,

    Just stumbled on your homepage.
    Excellent work! looking forward to reading your book.
    Saleem
    NRI-Texas

Comments are closed.